image
Sunday, Dec 15 2019 | Time 13:07 Hrs(IST)
  • وینزویلا کے اپوزیشن پر دہشت گردانہ حملہ کے منصوبہ کا الزام
  • نیپال : بس حادثہ میں 14 افراد ہلاک، 16 زخمی
  • ماروتی راو کی آخری رسومات چینئی میں انجام دے دی گئیں
  • شوہر کی سڑک حادثہ میں ہلاکت کے 6سال بعد بیوی کو 53لاکھ روپئے کا معاوضہ
  • بجلی کی بچت پر بیداری کیلئے حیدرآبا میں واک کا اہتمام
  • تلنگانہ کے کھمم ضلع کو کہر نے اپنی لپیٹ میں لے لیا۔گاڑی سوار صبح میں بھی روشنی کھولنے پر مجبور
  • سنکرانتی کے لئے حیدرآباد سے اے پی سفر۔بسوں اور ٹرینوں میں ریزرویشن
  • حالت نشہ میں گاڑی چلاتے ہوئے بائیک سوار کو ٹکر۔ سابق وزیر کے فرزند کی لوگوں نے پٹائی کردی
  • بیٹے کی شادی سے ایک دن پہلے دل کا دورہ پڑنے سے باپ کی موت
  • ’بادام- دل کی بیماریوں کے خطرات کم کرنے میں مددگار‘
  • گوپال گنج راشٹریہ جنتادل کے لیڈر کو مجرموں نے گولی ماری
  • ایران نے بنایا 100 زبانیں بولنے والا روبوٹ
Entertainment » Celebrity Brithday

گلشن باورا: فلمی نغمہ نگاری کو نئی جہتوں سے نوازا

گلشن باورا: فلمی نغمہ نگاری کو نئی جہتوں سے نوازا

12 اپریل سالگرہ کے موقع پر جاری ....
ممبئی، 11 اپریل (یو این آئی) بالی وڈ میں گلشن باورا کو ایک ایسے نغمہ نگار کے طورپر یاد کیا جاتا ہے جنہوں نے اپنے جذباتی نغمات سے تقریباً تین دہائیوں تک ناظرین کو اپنا دیوانہ بنایا ۔

بارہ (12) اپریل 1937ء کو شیخوپورہ میں پیدا ہونے والے گلشن باورا کا اصلی نام گلشن کمار مہتہ تھا۔
محض چھ برس کی عمر سے ہی ان کا رجحان شاعری کی جانب تھا ۔

ملک کی تقسیم کے بعد فسادات کے دوران اُن کے والد کا انتقال ہوگیا ۔
اس کے بعد وہ اور ان کے بھائی اپنی بڑی بہن کے پاس دہلی آگئے جہاں نے انہوں نے دہلی یونیورسٹی سے گریجویشن کی تعلیم حاصل کی۔
کالج میں تعلیم کے دوران انہوں نے شاعری شروع کر دی تھی ۔
وہ فلموں میں کام کرنے کے آرزومند تھے لیکن فی الحال انہوں نے ریلوے میں نوکری کے لیے درخواست دے دی۔
لیکن افسوس کہ یہ اسامی پہلے ہی پُر ہو چکی تھی ۔
قسمت نے ان کا ساتھ دیا ،ممبئی سے انہیں کلرک کی نوکری کی پیشکش ہوئی اور وہ 1955ء میں ممبئی آگئے۔

گلشن باورا نے اپنا دھیان فلم انڈسٹری میں لگانا شروع کردیا تاکہ انہیں فلم کے لیے کام مل جائے۔
انہیں کافی مشکلات کا سامنا بھی کرنا پڑا لیکن انہوں نے اپنی جدوجہد برقرار رکھی اور کئی چھوٹے بجٹ کی فلمیں بھی کیں جن سے انہیں کوئی خاص فائدہ نہیں پہنچا۔
اسی درمیان ان کی ملاقات کلیان جی آنند جی سے ہوئی اورانہیں 1959ء میں فلم ’’چندرسنیا‘‘ کے لیے ایک گیت لکھنے کیلئے کہا جس کے بول تھے ’’میں کیا جانوں کہاں لاگے یہ ساون متوالارے‘‘ اسے لتا منگیشکر نے گایا تھا۔

اسی سال ’’سٹہ بازار‘‘ ریلیز ہوئی جس کی موسیقی کلیان جی آنند جی نے دی تھی۔
اس فلم میں گلشن باورا کے لکھے ہوئے گیت بہت مقبول ہوئے۔
ان میں ’’تمہیں یاد ہو گا کبھی ہم ملے تھے‘‘ ’’آکڑے کا دھندا‘‘ اور ’’چاندی کے چند ٹکڑوں کیلئے‘‘ قابل ذکر ہیں۔
’’سٹہ بازار‘‘ کی تکمیل کے دوران فلم کے ڈسٹری بیوٹر شانتی بھائی پٹیل نے انہیں ’’باورا‘‘ کا نام دیا۔

جاری۔
یو این آئی۔
این یو۔

اکشے

اکشے اور سلمان کی فلمیں عید کے موقع پرباکس آفس پر آمنے سامنے

ممبئی، 4 دسمبر (یو این آئی) اکشے کمار اور سلمان خان کی فلمیں عید 2020 کے موقع پر باکس آفس پر ٹکرانے جارہی ہیں۔

رنویر

رنویر سنگھ نے سپر ہیروز پر مبنی فلم میں کام کرنے سےکیا انکار

ممبئی 24 نومبر (یو این آئی) بالی ووڈ اداکار رنویر سنگھ نے سپر ہیروز پر مبنی فلم میں کام کرنے سے انکار کر دیا ہے۔

جے

جے للتا کی بائیوپک کا پہلا ٹيجر ریلیز

ممبئی 24 نومبر (یو این آئی) بالی وڈ اداکارہ کنگنا رانوت کی آنے والی فلم 'تھلائوي' کا فرسٹ ٹيجر ریلیز ہو گیا ہے۔

ارجن

ارجن نے پانی پت کے لئے رنویر سے نہیں لی مدد

ممبئی 24 نومبر (یو این آئی) بالی ووڈ اداکار ارجن کپور کا کہنا ہے کہ انہوں نے فلم 'پانی پت' میں اپنے کردار کے لئے رنویر سنگھ سے کوئی مدد نہیں لی ہے۔

حقیقی

حقیقی زندگی میں بے حد خوش مزاج انسان ہیں رشی کپور: عمران ہاشمی

ممبئی، 21 نومبر (یو این آئی) بالی ووڈ اداکار عمران ہاشمی کا کہنا ہے کہ رشی کپور ریئل لائف میں غصہ ور نہیں بلکہ انتہائی خوش مزاج انسان ہیں۔

انٹرنیشنل

انٹرنیشنل فلم فیسٹیول میں دھرمیندر -راجیش کھنہ کی کلاسک فلمیں

ممبئی،14نومبر(یواین آئی)گوا میں ہونے والے انٹرنیشنل فلم فیسٹیول آف انڈیا (آئی ایف ایف آف انڈیا) میں دھرمیندر اور راجیش کھنہ کی کلاسک فلمیں دکھائی جائیں گی۔

غلام

غلام حیدر نے لتا کی صلاحیت کو پہچانا

(برسی 9 نومبر کے موقع پر)
ممبئی، 8 نومبر (یو این آئی) لتا منگیشکر کے فلمی کیرئر کے ابتدائی دور میں کئی ڈائریکٹر، پروڈیوسر اور موسیقاروں نے باریک آواز کی وجہ سے انہیں گانے کا موقع نہیں دیا لیکن اس وقت ایک موسیقار ایسے بھی تھے جنہیں لتا منگیشکر کی صلاحیت پر پورا عتماد تھا ۔

سنجیوکمار

سنجیوکمار ایک منفرد اداکار کے طور پر پہچانے جاتے تھے

(6نومبر برسی کے موقع پر)
ممبئی،5 نومبر (یو این آئی) گرودت کی بے وقت موت کے بعد ڈائریکٹر کے آصف نے اپنی فلم ’’لو اینڈ گاڈ‘‘ کی تخلیق کا کام بند کر دیا اور اپنی نئی فلم ’’سستا خون مہنگا پانی ‘‘كی پروڈکشن میں لگ گئے ۔

ہندی

ہندی فلم انڈسٹری کے عظیم فلمسازبی آر چوپڑہ

(5 نومبر برسی کے موقع پر)
ممبئی، 4 نومبر (یو این آئی) ہندستانی فلم انڈسٹری میں بی آر چوپڑا کو ایک ایسے فلمساز کے طور پر یاد کیا جائے گا جنہوں نے خاندانی، سماجی اور صاف ستھری فلمیں بناکر تقریباً پانچ دہائیوں تک فلم شائقین کے دلوں میں اپنی پہچان بنائے رکھی۔

کلاسیکی

کلاسیکی موسیقی کومنا ڈے نے فلمی دنیامیں ایک اعلی مقام پر پہنچایا

ممبئی، 23 اکتوبر (یواین آئی) ہندوستانی سنیما کی دنیا میں منا ڈے کو ایک ایسے گلوکار کے طور پر یاد کیا جاتا ہے جنہوں نے اپنی لاجواب پلے بیک گلوکاری کے ذریعے کلاسیکی موسیقی کو مخصوص شناخت دلائی۔

کامیڈی کنگ  کہے جانے والے محمود کو بھی کرنی پڑی جدوجہد

کامیڈی کنگ کہے جانے والے محمود کو بھی کرنی پڑی جدوجہد

ممبئی، 28 ستمبر (یو این آئی) اپنے مخصوص انداز، اسٹائل اورمزاحیہ آواز سے تقریباً پانچ دہائیوں تک ہنسانے اور گدگدانے والےمحمود نے فلم انڈسٹری میں کنگ آف کامیڈی کا درجہ حاصل کیا لیکن انہیں اس کے لئے کافی مشقت کرنا پڑی اوریہاں تک سننا پڑا کہ نہ تو وہ اداکاری کرسکتے ہیں اور نہ ہی کبھی اداکار بن سکتے ہیں۔

بھارت رتن شہنائی نواز استاد بسم اللہ خان

بھارت رتن شہنائی نواز استاد بسم اللہ خان

نئی دہلی، 20 اگست (یو این آئی) دُنیا بھر میں شہنائی کو شناخت دلانےاور اسے خاص و عام میں مقبول بنانے والے معروف شہنائی نواز استاد بسم اللہ خان کی پیدائش21 مارچ 1916 کو بہار کے گاؤں (دمراؤں) ضلع بکسر کے پیغمبربخش اور والدہ مٹھاں کے گھر ہوئی تھی۔ بسم اللہ خان کے آباؤ اجداد بھوج پور ضلع بہار کے شاہی دربار میں نقار خانہ میں ملازم بھی تھے۔ان کے والد پیغمبر بخش خان مہاراجہ جودھ پور کے دربار میں شہنائی نواز تھے۔اس سے پہلے ان کےپردادا استاد سالار حسین خان اور دادا رسول بخش خان بھی دمراؤں کے شاہی دربار میں گاتےتھے۔ ماں باپ نے اُن کانام امیرالدین خان رکھا تھا لیکن دادا نے امیرخان کو بسم اللہ میں بدل دیا اور ہاتھ میں شہنائی تھما دی۔ چونکہ موسیقی انہیں میراث میں ملی تھی اسی لیے بچپن سے ہی موسیقی میں دلچسپی رکھنے والے بسم اللہ خان نے اپنے ماموں علی بحش سےشہنائی نوازی کی تعلیم حاصل کی اور پھر بعد میں بسم اللہ خان انہی کے ساتھ کاشی کے وشوناتھ مندر میں شہنائی بجانےلگے۔چار یا پانچ برس کی عمر میں بنارس آ گئے تھے۔

زی ٹی وی پر انگوری بھابھی اور گڈن کے ذریعہ کرکرے نے نئی سوچ کا جشن منایا

زی ٹی وی پر انگوری بھابھی اور گڈن کے ذریعہ کرکرے نے نئی سوچ کا جشن منایا

نئی دہلی، 15مئی(یو این آئی)رواں ماہ مئی میں کئی کردار جن میں گڈن تم سے نہ ہوپائے گا-کہ گڈن، بھابھی جی گھر پر ہیں کہ انگوری اور ہپو کی الٹن پلٹن کے راجیش اور کچھ دیگر کردار انتہائی دلچسپ کردار میں نظر آئیں گے جہاں وہ اپنے کنبوں کو دلچسپ انداز میں جدید سوچ کی طرف مائل کریں گے۔

image